محبت کا پیام


 

بچپن سے سال مین دو دنوں کا بہت انتظار ہوتا تھا۔ پورا سال ان 2 دنوں کی پلاننگ کرتے، انہیں سوچتے گزر جاتا تھا۔ جوں جوں وہ دن قر یب آ رہے ہوتے دل ایک عجیب سی سرشاری میں ڈوبا ہوتا تھا، انگ انگ سے خوشی پھوٹ رہی ہوتی تھی اور وہ بہت خاص دن ہوتے تھے عیدالاضحی اور عیدالفطرکے۔

آج جب بچپن کی دہلیز سے آگے قدم رکھ چکے تو آنکھیں یہ منظر دیکھنے پر مجبور ہو رہی ہیں کہ اپنے اسلامی تہوار منانے کے جذبے تو ماند پڑ رہے ہیں، ان کے آنے پر تو چہروں کی دمک پھیکی پڑ رہی ہے لیکن یہ چہرے آئے دن کچھ اور دنوں کے آنے پر خوشی سے پاگل ہو رہے ہیں، یہ قوم آئے روز ایک نئے دن کبھی ویلنٹائن ڈے، کبھی ہیپی نیو ائیر کو پروموٹ کر کے ایسے پاگل ہو رہی جیسے یہی سب تو مقصدِ زندگی رہ گیا ہے۔ میڈیا ایسے ان خرافات کو پروموٹ کر رہا جیسے ان کا یہی فرضِ اولین ہے۔۔

آپ خوشی، تفریح کے نام پر مہذب طریقے سے ان دنوں کو منانا حق سمجھتے ہیں تو ٹھرئیں۔۔! صرف پچھلے ایک سال پر نظر دوڑائیں، ہمارے ساتھ کیا کیا ہوا اپنے زخموں پر صرف ایک دفعہ ایک طبیب کی سی نظر ڈالیں۔۔۔

اسی سال ہمارے پیارے نبی (صلی اللہ وسلم) کی ذاتِ اقدس کی توہین کی گئی، ان کی ذات کو مذاق کا نشانہ بناکر ان پر مووی بنائی گئی (نعوز باللہ)۔۔ اسی سال فلسطین کے نہتے مسلمانوں پر ظلم وستم کے پہاڑ ڈھا دیئے گئے، خونِ مسلم کی ندیاں بہا دی گئیں۔۔ اسی سال بلکہ اسی ماہ کشمیری مظالم کے خلاف آواز اٹھانے والے افضل گرو کو ناحق پھانسی دے دی گئی۔۔۔

یہ اس سال کی چند وہ جھلکیاں ہیں جو منظرِ عام پر آ چکی ہیں، جن پر ہم سب کا دل تڑپا، جن کو دیکھ سن کر ہم میں سے ہر ایک کی آنکھ اشک بار ہوئی لیکن یہ کیسے آنسو ہیں، یہ کیسا دکھ ہے جو آج ہم دکھ دینے والے کے ہی ساتھ مل کر پیار کی پتنگیں اڑانے لگ گئے، آج ہم آنسو دینے والے کو خوش کرنے کی خاطر اپنی پہچان، روایات بھول رہے، آخر اس کی وجہ کیا ہے؟ کیا ہمارا اپنی تہذیب، اپنی روایا ت پر سے اعتماد اٹھتا جا رہا ہے؟ ہم تو سراسر محبت کے پیامی ہیں، ہمارا مذہب تو ہے ہی محبت، ہردن، ہر لمحہ محبت پھیلانے کا درس ریتا پھر آج کیوں ہم محبتوں کے پیام کی تشہیر کے لیئے غیروں کے دن کے محتاج ہو گئے؟؟

خدارا۔۔۔۔ ! آنے والی نسلوں کو غیروں کی غلامی اور نقالی میں جانے سے بچا لیجئے، اپنے دین پر، اپنی روایات پر خود پراعتماد بنیں اور ایک پر اعتماد نسل کو پروان چڑھا ئیں۔۔ آج امتِ مسلمہ کی حالتِ زار کی یہی ایک وجہ ہے:

ترا نقشِ پا تھا جو رہنما، تو غبارِ راہ تھی کہکشاں

اسے کھو دیا تو زمانے بھر نے ہمیں نظر سے گرا دیا

(نمرہ سرور- گجرات)

Advertisements

Tagged: , ,

2 thoughts on “محبت کا پیام

  1. Maryam Mirza فروری 15, 2013 از 8:38 صبح Reply

    very very nice namrea mashALLAH….. HUM SUB KO ACTION LENY KI ZAROORAT HY OR BOHAT BOHAT MUBARAK HO K TUM PEHLY BARASNY WALI BOONDON MAIN SHAMIL HO 🙂

    • namrasarwar فروری 17, 2013 از 4:05 شام Reply

      hmmm jazakillah maryam.. ALLAH TALA hm sb ko haq baat kehny aur us pr amal krny ki tofeeq dien.. Aameen

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: